زبان ہے۔۔۔ پھسل ہی جاتی ہے۔۔۔

میاں بیوی بستر پر لیٹے ہوئے سونے کی تیاری کر رہے تھے، اچانک بیوی بولی۔۔۔۔!

بیوی: “سنو ! کیا تم میرے مرنے کے بعد دوسری شادی کر لو گے۔۔۔؟”

شوہر: “نہیں‌بیگم! تمہیں پتہ ہے میں تم سے کتنا پیار کرتا ہوں۔ میں دوسری شادی نہیں کرونگا۔۔۔!”

بیوی: “لیکن تم اتنی لمبی زندگی تنہا بھی تو نہیں‌ گزار سکتے، شادی تو تہمیں کرنا ہو گی۔۔۔!”

شوہر: (کروٹ بدلتے ہوئے) “دیکھا جائے گا۔ اگر ضروری ہوا تو کر لوں گا، ابھی میرا ایسا کوئی ارادہ نہیں ہے۔۔۔!”

بیوی: (دکھ بھری آواز میں ) “کیا تم واقعی دوسری شادی کر لو گے۔۔۔؟”

شوہر: “بیگم ! ابھی تم خود ہی تو زور دے رہی تھی۔۔۔!”

بیوی: “اچھا کیا تم اسے اسی گھر میں لاؤ گے۔۔۔؟”

شوہر: “ہاں، میرا خیال ہے ہمارا گھر کافی بڑا ہے اور اسے یہیں رہنا ہو گا۔۔۔!”

بیوی: “کیا تم اسے اسی کمرے میں رکھو گے۔۔۔؟”

شوہر: “ہاں، کیونکہ یہی تو ہمارا بیڈ روم ہے۔۔۔!”

بیوی: “کیا وہ اسی بیڈ پر سوئے گی۔۔۔؟”

شوہر: (موبائل پر ٹائم دیکھتے ہوئے) “بھئی بیگم ظاہر ہے اور کہاں سوئے گی۔۔۔؟”

بیوی: “اچھا کیا وہ میری جیولری استعمال کرے گی۔۔۔؟”

شوہر: “نہیں اس جیولری سے تمہاری سہانی یادیں وابستہ ہیں۔ وہ یہ استمعال نہیں کر سکے گی۔۔۔!”

بیوی: “اور میرے کپڑے۔۔۔!”

شوہر: “پیاری بیگم! جسے شادی کرنا ہو گی وہ کپڑے بھی خود ہی لے کر آئے گی۔۔۔!”

بیوی: “اور کیا وہ میری گاڑی بھی استعمال کرے گی۔۔۔؟”

شوہر: (جلدی میں) “نہیں یار، اُسے گاڑی چلانا نہیں آتی۔ بہت دفعہ بولا لیکن وہ سیکھنا ہی نہیں چاہتی۔۔۔!”

بیوی: “کیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟”

50% LikesVS
50% Dislikes

اپنا تبصرہ بھیجیں